petrol dollar gold

سونا سستا ہو گیا، ڈالر مزید گر گیا، پٹرول مزید سستا ہونے کی امید

عالمی مارکیٹ میں اضافے کے باوجود پاکستان میں سونے کی قیمت میں بڑی کمی. ڈالر کی قیمت مزید تین روپے کم ہوگئی. پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 15 روپے تک کمی کا امکان

کاروباری ہفتے کے تیسرے یعنی بدھ کے روز بلین مارکیٹ میں ٹریڈنگ کے دوران سونے کی قیمت 4 ڈالر کے اضافے سے 1795 ڈالر فی اونس کی سطح پر پہنچی اُس کے باوجود مقامی صرافہ مارکیٹوں میں ڈالر کی قدر میں کمی برقرار رہنے کے سبب فی تولہ اور دس گرام سونے کی قیمتوں میں بالترتیب 1400 روپے اور 1200 روپے کی کمی واقع ہوئی۔

حالیہ کمی کے بعد کراچی، حیدرآباد، سکھر، ملتان، لاہور، فیصل آباد، راولپنڈی، اسلام آباد، پشاور اور کوئٹہ کی صرافہ مارکیٹوں میں فی تولہ سونے کی قیمت گھٹ کر 141700 روپے اور فی دس گرام سونے کی قیمت گھٹ کر 121485روپے کی سطح پر آگئی۔ دوسری جانب فی تولہ چاندی کی قیمت بھی 20 روپے گھٹ کر 1560روپے اور دس گرام چاندی کی قیمت 17.16روپے گھٹ کر 1337.44روپے کی سطح پر آگئی.

ایکسپریس کے مطابق مثبت معاشی اشاریوں کے نتیجے میں گذشتہ دو ہفتوں سے ڈالر کی تنزلی کا سلسلہ جمعرات کو بھی برقرار رہا جس سے ڈالر کے انٹربینک ریٹ 218.88 اور اوپن مارکیٹ ریٹ 217 روپے سے بھی نیچے آگئے۔

آئی ایم ایف کی جانب سے کسی بھی وقت معاہدے پر دستخط کیے جانے کی اطلاعات زیر گردش رہیں جس کی وجہ سے انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر اتار چڑھاؤ کے بعد مزید 3.03 روپے کی کمی سے 218.88 روپے کی سطح پر بند ہوئی۔ اسی طرح 28 جولائی کے 239 روپے 94 پیسے کے مقابلے میں اب تک انٹربینک مارکیٹ میں مجموعی طور پر 21 روپے 6 پیسے کی کمی واقع ہوئی ہے۔

اقتصادی افق پر بہتری کی خبروں، نادہندگی کے خطرات ختم ہونے اور حکومت کی جانب سے آئندہ تین ماہ تک درآمدات پر مختلف پابندیوں سے امپورٹرز ڈالر کم خرید رہے ہیں جبکہ ایکسپورٹرز اپنے ایکسپورٹ ریسیٹس مارکیٹ میں بھنارہے ہیں۔

بدھ کو بھی اوپن کرنسی مارکیٹ میں بھی ڈیمانڈ نہ ہونے کے سبب ڈالر کی قدر مزید 2 روپے کی کمی سے 216 روپے کی سطح پر بند ہوئی۔ اس طرح سے 28 جولائی 244 روپے کے مقابلے میں اب تک اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر کی قدر میں مجموعی طور پر 28 روپے کی کمی واقع ہوچکی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ رواں سال میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ ابتدائی تخمینے سے کم ہوکر 7 سے 8 ارب ڈالر پر آنے اور روان نئے بیرونی قرضوں کی ضرورت ابتدائی 36 سے 41 ارب ڈالر کے تخمینے سے کم ہوکر 32 ارب 20 کروڑ ڈالر پر آنے کی پیش گوئیوں اور معاشی استحکام کے ساتھ زرمبادلہ پر دباؤ دو ماہ میں ختم ہونے کی توقعات پر ڈالر کمزور اور روپیہ تگڑا ہوتا جارہا ہے۔

عالمی مارکیٹ میں خام تیل اور دیگر کموڈٹیز کی گھٹتی ہوئی قیمتوں سے درآمدی بل مزید کم ہونے کی توقعات سے بھی ڈالر کے طلب گار کم ہوگئے ہیں اور مارکیٹ میں ڈالر کے خریدار انتہائی محدود ہوگئے ہیں لیکن اس کے برعکس فروخت کنندگان کی تعداد بڑھتی جارہی ہے جس سے مارکیٹ میں سپلائی بڑھ گئی ہے اور روپیہ ڈالر کے مقابلے میں یومیہ بنیادوں پر تگڑا ہوتا جارہا ہے

اسلام آباد: آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے حوالے سے نئی سمری پر کام شروع کردیا، جس کے مطابق پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 15 روپے فی لیٹر تک کمی کا امکان ہے۔

عالمی منڈی میں خام تیل کی قیمتوں میں کمی کے بعد ملکی سطح پر بھی پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کم ہونے کا امکان ہے، جس کے لیے اوگرا نے ورکنگ کا آغاز کردیا ہے۔

ذرائع کے مطابق پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 15 روپے فی لٹر تک کمی کا امکان ہے، پیٹرولیم مصنوعات پر عائد لیوی ٹیکس کی شرح کو کم کر کے بھی عوام کو ریلیف دیا جاسکتا ہے۔ ذرائع کے مطابق پٹرول کی قیمت میں 12 اور ڈیزل کی قیمت میں 15 روپے تک کمی کا امکان ہے۔

اوگرا کی جانب سے نئی قیمتوں کے تعین کے لیے سمری 13 اگست کو وزارت خزانہ کو ارسال کی جائے گی، جس پر وزیراعظم کی منظوری کے بعد 15 اگست کو نئی قیمتوں کا اعلان ہوگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں