کالجوں میں گریجویشن کی جگہ ایسوسی ایٹ ڈگری شروع کرنے کا فیصلہ

کراچی: جامعہ کراچی کی انتظامیہ نے حکومت سندھ کی سفارش پر الحاق شدہ کالجوں میں دو سالہ گریجویشن(بی اے، بی کام اور بی ایس سی) پروگرام ختم کرتے ہوئے اس کی جگہ دو سالہ ایسوسی ایٹ ڈگری پروگرام شروع کا اصولی فیصلہ کیا ہے.

ابتداء میں ایسوسی ایٹ ڈگری پروگرام گریجویشن پروگرام کی طرز پر سالانہ امتحانی نظام کے تحت شروع ہوگا اور سیمسٹر سسٹم اس پروگرام میں لاگو نہیں ہوگا جبکہ ریگولر کے ساتھ ساتھ پرائیویٹ طلبہ بھی ایسوسی ایٹ ڈگری میں انرولڈ ہوسکیں گے مذکورہ فیصلے کی منظوری کے لیے اکیڈمک کونسل کا اجلاس جمعرات 2 ستمبر کی دوپہر طلب کیا گیا ہے جس کی صدارت جامعہ کراچی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر خالد عراقی کریں گے.

اس سلسلے میں جامعہ کراچی کے رجسٹرار پروفیسر ڈاکٹر عبدالوحید کے دستخط سے جاری ایجنڈے میں محکمہ یونیورسٹیز اینڈ بورڈز میں منعقدہ ایک اجلاس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ بی کام ، بی اے اور بی ایس سی پروگرام(ریگولر/ پرائیویٹ) عدالتی احکامات کے تناظر میں ختم کیا جارہا ہے.

اس اجلاس میں دی گئی تجاویز کے مطابق اب بی ایس سی ، بی کام اور بی اے کی ڈگری کا nomenclature تبدیل ہوجائے گا اور اس کی جگہ نیا ڈگری ٹائٹل ایسوسی ایٹ ڈگری ان سائنس، کامرس اور آرٹس شروع ہوگا تاہم واضح رہے شروع ہونے والے یہ تینوں پروگرام گریجویشن کے مساوی نہیں ہونگے بلکہ گریجویشن کے خواہشمند طلبہ کو دو سال ایسوسی ایٹ ڈگری کی تکمیل کے بعد یونیورسٹی کے سال سوئم میں داخلہ لینا ہوگا اور مزید دو سال پڑھنے کے بعد طالب علم متعلقہ شعبے میں اپنی گریجویشن مکمل کرسکے گا.

جامعہ کراچی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر خالد عراقی کے مطابق ایچ ای سی کی انڈر گریجویٹ پالیسی ۔یں اس حوالے سے گائیڈ لائن موجود ہے تاہم اس کی منظوری بھی جامعہ کراچی کی اکیڈمک کونسل دے گی۔ مزید براں رجسٹرار جامعہ کراچی کی جانب سے اکیڈمک کونسل کے اجلاس کے جاری ایجنڈے کے مطابق فی الحال ایسوسی ایٹ ڈگری پروگرام کے لیے کورس آئوٹ لائن ،سلیبس اور قوانین میں کسی قسم کی تبدیلی نہیں کی جائے گی بلکہ وہ کورس آئوٹ لائن اور سلیبس جو بی اے، بی ایس سی اور بی کام میں رائج ہے وہی ایسوسی ایٹ ڈگری میں بھی قابل عمل ہونگے اور یونیورسٹی کی جانب سے انھیں اکیڈمک قوانین کو نوٹیفائی کیا جائے گا، اسی طرح ایسوسی ایٹ ڈگری کا امتحانی نظام گریجویشن کی طرز پر سالانہ اور ضمنی ہوگا۔

علاوہ ازیں اس سلسلے میں پہلے سے قائم کمیٹی نصاب اور امتحانی نظام کی تبدیلی کے حوالے سے اپنی سفارشات ایچ ای سی کی گائیڈ لائن کے تناظر میں پیش کرے گی جسے اکیڈمک کونسل سے منظور کرایا جائے گا۔

یاد رہے کہ اس سے قبل جولائی کے پہلے ہفتے میں جامعہ کراچی کی اکیڈمک کونسل نے سرکاری و نجی کالجوں میں روایتی دو سالہ گریجویشن پروگرام(بی اے ، بی ایس سی اور بی کام ) اور ایم اے بحال کردیا ہے اور اس میں چند ہی روز میں داخلے شروع کرنے کا فیصلہ کیا تھا جب کہ کالجوں میں دو سالہ ایسوسی ایٹ ڈگری آئندہ برس جون 2022 تک موخر کردی گئی ہے تاہم اس منعقدہ اکیڈمک کونسل کے بعد محکمہ یونیورسٹیز اینڈ بورڈز کی جانب سے اس سلسلے میں ایک اجلاس بلایا گیا تھا جس میں سیکریٹری یونیورسٹیز اینڈ بورڈز کے علاوہ سیکریٹری کالجز خالد حیدر شاہ ، سندھ یونیورسٹی کے وائس چانسلر ڈاکٹر صدیق کلہوڑو ، لیاری یونیورسٹی کے وائس چانسلر ڈاکٹر اختر بلوچ اور جامعہ کراچی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر خالد عراقی سمیت دیگر شریک ہوئے تھے۔

اس اجلاس میں شرکاء پر واضح کیا گیا تھا کہ ایچ ای سی کی سفارش اور عدالتی احکامات کے تناظر میں حکومت سندھ یہ چاہتی ہے کہ کالجوں میں ایسوسی ایٹ ڈگری پروگرام ہی شروع کیا جائے جس کے بعد جامعہ کراچی کی جانب سے مذکورہ قدم اٹھایا گیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں