وسائل اور آبادی کے تواز کو برقرار رکھ کر ہی ملکی ترقی ممکن ہو سکتی ہے، حاجی امتیاز احمد

ممبر قومی اسمبلی حاجی امتیاز احمد چوہدری نے کہا ہے کہ حکومت آبادی میں بے ہنگم اضافہ کی روک تھام کیلئے اصلاحی و انتظامی اقدامات کر رہی ہے، کیونکہ وسائل اور آبادی کے تواز کو برقرار رکھ کر ہی ملکی ترقی ممکن ہو سکتی ہے۔

منڈی بہاﺅالدین( ایم.بی.ڈین نیوز 10 جولائی2021) ان خیالات کا اظہار انہوں نے محکمہ بہبود آبادی کے زیر اہتمام عالمی یوم آبادی کے حوالے سے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ سیمینار میں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو توقیر الیاس چیمہ، ڈسٹرکٹ پاپولیشن ویلفیئر آفیسر ابوالحسن مدنی، ڈپٹی ڈائریکٹر سوشل ویلفیئر عاطف علی وڑائچ، ڈی ڈی او پاپولیشن عتیق الرحمٰن، ڈی ڈی اور پاپولیشن (ٹیکنیکل) ڈاکٹر عمائمہ، ڈاکٹر سدرا سکندر ، ڈسٹرکٹ چیئرمین بیت المال ہارون اصغر، علماء کرام، ضلع بھر کے فلاحی مراکز کی انچارجز ، میڈیا نمائندگان سمیت خواتین کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔

ممبر قومی اسمبلی حاجی امتیاز احمد چوہدری نے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہر سال پاکستان کی آبادی میں 42 لاکھ کا اضافہ ہو رہا ہے جو دنیا کے کئی ممالک کی مجموعی آبادی سے زیادہ ہے۔ اس طرح ہم ملک کے اندر نیا ملک بناتے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے آبادی کے مسئلے پر قابو پانے کیلئے بجٹ میں 5 بلین روپے رکھ کر ٹاسک فورس تشکیل دی ہے جو کہ بڑھتی ہوئی آبادی کے مسائل اور چیلنجز کو حل کرے گی ۔

انہوں نے کہاکہ پونے چار کروڑ آبادی والا ملک اب تقریبا 23 کروڑ آبادی تک پہنچ گیا ہے اور اگر آبادی کے مسئلے کو حل نہ کیا گیا تو 2047 تک ملک کی آبادی پچاس کروڑ ہو جائے گی جس سے ملک میں غربت، بے روزگاری اور بھر افلاس بڑھے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں سنجیدگی سے بڑھتی ہوئی آبادی پر کنٹرول کرنا ہو گا اسی میں ہماری بقا ہے۔

ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو توقیر الیاس چیمہ اور ڈسٹرکٹ پاپولیشن ویلفیئر آفیسر ابوالحسن مدنی نے کہاکہ پاکستان میں عام آدمی کا معیار زندگی بلند کرنے کیلئے شرح آبادی پر کنٹرول نا گزیر ہے۔ معاشرے میں اژدھام کی نہیں بلکہ نظم کی ضرورت ہے۔ محکمہ بہبود آبادی چھوٹے کنبے کی افادیت کو اجاگر کرنے کیلئے تعلیمی اداروں، ۔انہوں نے کہاکہ شرح آبادی میں کمی کئے بغیر ترقی کا کوئی اشاریہ ٹھیک نہیں ہو سکتا۔حالیہ عرصے کے دوران حکومت نے صحت اور تعلیم کی سہولتوں میں بے پناہ اضافہ کیا لیکن مطلوبہ نتائج نہیں مل سکے جس کی وجہ شرح آبادی میں بے تحاشہ اضافہ ہے۔انہوں نے کہاکہ ماں اور بچے کی صحت کو برقرار رکھنے کیلئے بہبود آبادی کے اصولوں پر عمل کرنا ہو گا ۔

اسی حوالے سے محکمہ بہبود آبادی مذہبی حلقوں، تعلیمی اداروں، اور گاﺅں کی سطح پر سیمینار اور دیگر معلوماتی پروگرامز منعقد کرواتا ہے جس کے خاطر خواہ نتائج حاصل ہو رہے ہیں اور بہبود آبادی کے اصولوں کی حمایت میں روشنی کی نئی امید پیدا ہوئی ہے۔سیمینار سے ڈپٹی ڈائریکٹر سوشل ویلفیئر عاطف علی وڑائچ، ڈپٹی ڈسٹرکٹ پاپولیشن ویلفیئر آفیسر (ٹیکنیکل) ڈاکٹر عمائمہ، ڈاکٹر سدرا سکندر نے عالمی یوم آبادی کے حوالے سے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں