صحت مند معاشرے کا قیام خاندانی منصوبہ بندی اور وسائل کی منصفانہ تقسیم پر عملدرآمد سے ہی ممکن ہے، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر

منڈی بہاﺅالدین( ایم.بی.ڈین نیوز 26 جون2021 ) ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر جنرل محمد شفیق نے کہا ہے کہ صحت مند معاشرے کا قیام خاندانی منصوبہ بندی اور وسائل کی منصفانہ تقسیم پر عملدرآمد سے ہی ممکن ہے، انہوں نے بتایا بلاشبہ محکمہ بہبود آبادی کا بنیادی کام ہی عوام الناس کو مختلف طریقوں سے آمادہ کر کے خاندانی منصوبہ بندی پر عملدرآمد کروانا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈی سی آفس میں محکمہ بہبود آبادی کی ماہانہ کارکردگی کے حوالے سے ڈسٹرکٹ کوآرڈینیشن کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا ۔اجلاس میں سی ای او ہیلتھ (ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی) ڈاکٹر محمد الیاس گوندل، ڈپٹی ڈائریکٹر سوشل ویلفیئر عاطف علی وڑائچ، ڈسٹرکٹ پاپولیشن ویلفیئر آفیسر ابوالحسن مدنی، میڈیکل سپرنٹنڈنٹ اختر حسین بلوچ، اسسٹنٹ ڈائریکٹر ایجوکیشن اشرف تارڑ، ڈپٹی ڈسٹرکٹ پاپولیشن ویلفیئر آفیسر عتیق الرحمٰن، این جی اوز کے نمائندوں، مذہبی علمائے کرام اور دیگر نے شرکت کی۔

ڈسٹرکٹ پاپولیشن ویلفیئر آفیسر ابوالحسن مدنی شرکاء اجلاس کو محکمہ کی ماہانہ کے علاوہ سالانہ کارکردگی کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی ۔ انہوں نے کوویڈ 19 وباءکے دوران محکمہ کی کارکردگی کے بارے میں بھی تفصیلاً آگاہ کیا۔ ڈی او پاپولیشن ابوالحسن مدنی نے اجلاس کو بتایا کہ ضلع منڈی بہاﺅالدین میں محکمہ کی سربراہی میں 51 فلاحی مراکز اور 2 فیملی ہیلتھ کلینکس عوام الناس کو خاندانی منصوبہ بندی کے لحاظ سے معیاری طبی سہولیات مہیا کر رہے ہیں۔ علاوہ ازیں دور دراز علاقوں میں محکمہ صحت کی معاونت سے محکمہ بہود آبادی کے 2 فری فیملی ہیلتھ موبائل یونٹ قائم کر کے لوگوں کو صحت کی خاندانی منصوبہ بندی کی سہولیات مہیا کر رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ محکمہ صحت اور محکمہ تعلیم اور دیگر تمام لائن ڈیپارٹمنٹ بھی محکمہ بہبود آبادی کے داتھ مل کر عوام الناس کو ضروری آگاہی جیسی سہولیات فراہم کر رہے ہیں ۔ انہوں نے اجلاس کو بتایا کہ سکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیوں میں بلوغت، ذاتی صفائی اور متوازن غذا کے حوالے سے ضروری معلوماتی سیشنز منعقد کئے جاتے ہیں ۔اس حوالے سے لیکچرز اور ٹیچرز کو خصوصی تربیت فراہم کی جاتی ہے تا کہ وہ طلباءو طالبات کو خاندانی منصوبہ بندی کے حوالے سے معلومات فراہم کر سکیں ۔ جس پر ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر نے ڈی او بہبود آبادی کو محکمے کی مجموعی کارکردگی کو مزید بہتر بنانے کی ہدایت کی تا کہ بہبود آبادی کی سرگرمیوں کے حوالے سے ضلع صوبے بھر میں اولین پوزیشن دوبارہ حاصل کر سکے۔

انہوں نے کہا کہ محکمے کو سرگرمیوں کے حوالے سے جہاں جہاں خامیاں پائی جاتی ہیں ان کو درست کر کے رپورٹ پیش کی جائے اور اعلیٰ حکام سے رابطہ کر کے ادویات کے سٹاک اور دیگر امورز کو بہتر بنایا جائے ۔ محمد شفیق نے کہا کہ تمام محکموں اور شرکاءپر زور دیا کہ تیزی سے بڑھتی ہوئی آبادی کے درپیش مسائل کو مربوط حکمت عملی سے حل کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی زیادہ آبادی نوجوانوں پر مشتمل ہے۔ ان کی تعلیم و تربیت سے ملکی پیداوار اور ترقی کی شرح میں اضافہ کیا جا سکتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں