خواتین کو اس مفت ہیلپ لائن کا لازمی معلوم ہوناچاہیے

پاکستان میں تولیدی صحت کیلئے ایک ہیلپ لائن ہے جو ملک بھر کی خواتین کو مفت مشاورت اور مدد فراہم کرتی ہے لیکن بہت سارے لوگوں کو اس کے بارے میں معلوم ہی نہیں۔

یہ ہیلپ لائن ایسوسی ایشن برائے زچہ بچہ (امان) اور پاپولیشن کونسل نے 15 جون کو لانچ کی۔ ایسوسی ایشن برائے ماؤں اور نوزائیدہ اور آبادی کونسل کے ذریعہ ہیلپ لائن 15 جون کو شروع کی گئی تھی جبکہ اس کے شراکت داروں میں سوسائٹی آف آبسٹٹریشنز اینڈ گائناکالوجسٹ اور اقوام متحدہ کی پاپولیشن فنڈ شامل ہیں۔ ہیلپ لائن پر پیر سے ہفتہ تک صبح 11 بجے سے شام 7 بجے تک رابطہ کیا جاسکتا ہے۔

ایسوسی ایشن برائے زچہ بچہ سے وابستہ ڈاکٹر حمیرا منصور نے بتایا کہ ہیلپ لائن پر دو گھنٹے کی شفٹوں میں کام کرنے والے چار افراد کام کرتے ہیں۔ ہیلپ لائن پر موجود خواتین انتہائی تجربہ کار ڈاکٹر ہیں۔ اس ہیلپ لائن پر خواتین ان چیزوں کے بارے میں معلومات لے سکتی ہیں

شادی سے پہلے اسکریننگ ٹیسٹ
گائناکالوجی انفیکشنز
حیض
حمل
حمل کے بعد کے مسائل
نوزائیدہ بچوں کی صحت اور بیماریاں

دودھ پلانا
حمل کے دوران کرونا وائرس
خاندانی منصوبہ بندی
اسقاط حمل

مانع حمل (شادی شدہ اور غیر شادی شدہ خواتین کے لیے)

ہنگامی مانع حمل
رجونورتی
بانجھ پن
دماغی صحت

ڈاکٹر حمیرا منصور نے کا کہنا ہے کہ ہر عمر کی خواتین ہیلپ لائن پر کال کرسکتی ہے۔ اگر کوئی چاہے تو ہر بار ایک ہی ڈاکٹر سے مشورہ لینے کی درخواست بھی کرسکتی ہے۔ ڈاکٹر حمیرا منصور نے سماء ڈیجیٹل کو بتایا کہ یہ سہولت پورے ملک کیلئے دستیاب ہے۔ ملک کے ہر کونے سے خواتین کال کرسکتی ہیں۔ اب تک لگ بھگ 350 فون موصول ہوئے ہیں۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ خواتین کو اس مفت سہولت کے بارے میں معلوم ہی نہیں۔

ہیلپ لائن کے پاس پی ٹی سی ایل کے ساتھ واٹس ایپ نمبر بھی ہے۔ وہ خواتین جو پڑھی لکھی نہیں ہیں اور اپنے ٹیسٹ کے نتائج یا میڈیکل رپورٹس پڑھنے سے قاصر ہیں، وہ دستاویزات کی تصویر واٹس ایپ نمبر پر بھیج سکتی ہیں۔ اس کے بعد انہیں اسی نمبر سے کال آئے گی۔ یہ نمبر 24 گھنٹے فعال رہتا ہے۔

ہیلپ لائن نمبر 021-35205383
واٹس ایپ نمبر 0309-2901335

اپنا تبصرہ بھیجیں