ایف بی آر کی جانب سے ٹیکس کی عدم ادائیگی پر سیل کی جانے والی ڈیفالٹر چائے کی فیکٹر ی میں بدستور کام جاری

tax

ملک وال (نامہ نگار) ایف بی آر کی جانب سے ٹیکس کی عدم ادائیگی پر سیل کی جانے والی کروڑوں روپے کی ڈیفالٹر چائے کی فیکٹر ی میں بدستور کام جاری زرائع کے مطابق چائے کی فیکٹری میں مخصوص افراد کو کام پر لگا کر رات کو چائے کی پیکنگ کر کے مختلف مزدوں کے ذریعے علاقہ بھر میں چائے کی سپلائی جاری و ساری ہے چند دن پہلے جب فیکٹری کو سیل کیا تو ایڈیشنل ڈائریکٹر ایف بی آر سکی ڈیفالٹر چائے کی فیکٹر ی میں بدستور کام جاری زرائع کے مطابق چائے کی فیکٹری میں مخصوص افراد کو کام پر لگا کر رات کو چائے کی پیکنگ کر کے مختلف مزدوں کے ذریعے علاقہ بھر میں چائے کی سپلائی جاری و ساری ہے چند دن پہلے جب فیکٹری کو سیل کیا تو ایڈیشنل ڈائریکٹر ایف بی آر سجاد اظہر نے میڈیا کو بتایا کہ چائے کی فیکٹری کے کروڑوں روپے سیلز ٹیکس کے کیس ہائی کورٹ میں چل رہے تھے جس میں سے ایک کیس ایف بی آر کے حق میں آنے کے بعد ڈیفالٹر چائے کی فیکٹری کو متعدد بار ٹیکس ادائیگی کے نوٹس جاری کیے گئے مگر عدم ادائیگی پر فیکٹری کو سیل کر دیا گیا اور جب تک ٹیکس کی رقم خزانہ سرکار میں جمع نہیں ہو جاتی تب تک فیکٹری سیل رہے گی اور کوئی کام نہیں کرنے دیا جائے گا مگر فیکٹری میں چائے کی پتی سمیت دیگر تمام اشیا کی تیاری ، پیکنگ اور سپلائی کی اطلاع ملنے پر ایڈیشنل ڈائریکٹر ایف بی آر سے اس متعلق موقف لینے کے لیے درجنوں بار رابطہ کرنے کی کوشش کی گئی مگر انہوں نے فون ہی اٹینڈ نہیں کیا جس سے محکمہ کی بدنیتی کی بدبو واضح ہوتی ہے کیوں کہایڈیشنل ڈائریکٹر ایف بی آر کا یہ بھی کہنا تھا کہ متعلقہ ڈی پی او ضلع منڈی بہاوالدین اور پولیس تھانہ ملک وال کو اطلاع دے دی گئی ہے اگر فیکٹری کا کام جاری رکھنے یا سیل کھولنے کی کوشش کی جائے تو فیکٹری مالکان کے خلاف پرچہ درج کیا جائے مگر اس سلسلہ میں تھانہ ملک وال رابطہ کیا گیا تو محرر نے بتایا کہ زبانی اطلاع ہمارے پاس موجود ہے مگر تحریراً ایف بی آر حکام یا متلعقہ افسران کی جانب سے کوئی حکم یا اطلاع ہمیں نہ دی گئی ہیباوثوق ذرائع کے مطابق ایف بی آرکے چند افسران کی ملی بھگت سے چائے کی فیکٹری میں ٹیکس کی ادائیگی کے بغیر ہی چائے کی پیکنگ اور سپلائی کا کام متواتر جاری ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں