تین اضلاع کے سنگم پر واقع چک نظام روڈ ڈکیتوں کی آماجگاہ بن گیا

vectoria bridge jehlum bridge malakwal PD Khan bridge
ملک وال(نامہ نگار)تین اضلاع کے سنگم پر واقع چک نظام روڈ ڈکیتوں کی آماجگاہ بن گیا ضلع سرگودھا، جہلم اور منڈی بہاوالدین کو ملانے والے واحدچک نظام روڈ پر پولیس چوکی نہ ہونے کی وجہ سے روزانہ کی بنیادوں پر ڈکیتیاں ہونے لگیں فی الفور پولیس چوکی کا انعقاد یقینی بنایا جائے انجمن تحفظ شہریاں کے صدر ملک اعجاز الحق مدنی نے صحافیوں کو بتایا کہ ڈکیتیوں کی بڑھتی ہوئی وارداتوں کی ذمہ داری تھانہ میانی اور تھانہ ملک وال حدود کا تنازعہ بنا کر ایک د وسرے پر ڈال دیتے ہیں چک نظام روڈ پر 2ماہ قبل19سالہ ممرینہ ولد محمد بشیر قوم باجوہ ساکن مختار کالونی اجو وال ڈکیتی کے دوران گولی لگنے سے جاں بحق ہوئی اور اسی چک نظام روڈ پر حساس ادارہ کا ملازم محمد امتیاز ولد محمد یٰسین سکنہ محلہ شیرانوالہ ملک وال ڈکیتوں کی 2گولیوں کا نشانہ بنا جو خوش قسمتی سے بچ گیا چک نظام روڈ ضلع سرگودھا اور ضلع جہلم کی آخری حد ہے جہاں سے تحصیل ملک وال کا آغاز ہوتا ہے چک نظام پر روڈ ہونے والی ڈکیتیوں کی زمہ داری چک نظام روڈ سے 9کلومیٹر دور تھانہ میانی اور 3کلومیٹر دور تھانہ ملک وال حدود کا تنازع بنا کر ذمہ داری ایک دوسرے پر ڈال دیتے ہیں جبکہ ہزاروں لوگوں کا دریا ئے جہلم کے آر پار جانے کے لیے بھی واحدچک نظام سڑک کا استعمال کرتے ہیں انجمن تحفظ شہریاں کے صدر ملک اعجاز الحق مدنی نے آئی جی پنجاب پولیس سے مطالبہ کیا کہ چک نظام روڈ پر پولیس چوکی کا قائم کی جائے تا کہ ڈکیتیوں کی وارداتوں کم ہونے کے ساتھ قیمتی جانوں کا ضیاع روکا جا سکے۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں