محکمہ تعلیم منڈی بہاؤالدین نے مزید 24سرکاری سکولوں کو پرائیویٹائز کرنے کی منظوری دے دی

teahcer students study education
محکمہ تعلیم منڈی بہاؤالدین نے مزید 24سرکاری پرائمری سکولوں کو پرائیویٹائز کر کے پنجاب ایجوکیشن فاؤنڈیشن کے حوالے کرنے کی منظوری دیدی، پرائیوٹائز کئے جانے والے سکولوں میں 19بوائز جبکہ 5گرلز سکول ہیں اساتذہ کو دیگر سکولوں میں ٹرانسفر کیا جا رہا ہے ذرائع


ملک وال(نامہ نگار) محکمہ تعلیم منڈی بہاؤالدین نے پنجم کے ناقص نتائج اور طلبا کی کم تعداد کے باعث ضلع بھر میں مزید 24سکولوں کو نجی شعبہ کے حوالے کرنے کی منظوری دیدی ہے پیف کے حوالے کئے جانے والے سکولوں میں گورنمنٹ پرائمری سکول بوسال مصور، پرائمری سکول ڈیرہ رسولیاں،گورنمنٹ پرائمری سکول نمبر 2ملک وال،سکول نمبر 2رکھ ڈفر، سکول نصیر پور ملک وال، پرائمری سکول مکھنانوالی، پرائمری سکول چک میموری، پرائمری سکول چک نمبر 14، پرائمری سکول کھمب خورد ، گرلز پرائمری سکول داپی، گرلز پرائمری سکول چک نمبر 40، پرائمری سکول نئی لوکڑی بھچر،گرلز پرائمری سکول ڈیرہ سالم خریف، پرائمری سکول ڈیرہ محمدبوٹا، گرلز پرائمری سکول ڈیرہ صالحوں، پرائمری سکول ڈیرہ احمد سعید ، پرائمری سکول چوٹ کلاں، پرائمری سکول کوٹ رحم شاہ ، پرائمری سکول ڈیرہ تارڑاں، پرائمری سکول ٹھٹھی میکن، پرائمری سکول رنڈیالی، پرائمری سکول باسی کلاں اور گورنمنٹ پرائمری سکو ل پل کساں شامل ہیں ۔ذرائع کے مطابق پرائیویٹائز ہونے والے سکولوں کے استاذہ کو دیگر سکولوں میں ٹرانسفر کیا جا رہا ہے جس پر ڈپٹی ڈی ای او کے دفاتر میں کام جا ری ہے۔ سرکاری سکول نجی شعبہ کے حوالے کئے جانے پر اساتذہ میں سخت اضطراب پایا جا تا ہے تاہم پنجاب ٹیچرز یونین پنجاب حکومت کی طرف سے وعدوں کے باوجود مطالبات تسلیم نہ کئے جانے پر تاحال خاموش ہے ۔ متاثرہ اساتذہ نے پنجاب ٹیچرز یونین کے رہنماؤں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ سرکاری سکولوں کے پرائیویٹائز کئے جانے کے عمل کو روکنے کیلئے ٹھوس لائحہ عمل اختیار کریں اور اساتذہ کو نے نئی مصیبتوں سے بچانے کیلئے پنجاب حکومت کے ارباب اختیار سے رابطہ کریں ۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں