چک نظام کے قریب دریائے جہلم کے کنارے سینکڑوں افراد کا ٹریفک پل نہ بنانے پر احتجاجی مظاہرہ

vectoria bridge jehlum bridge malakwal PD Khan bridge
چک نظام کے قریب دریائے جہلم کے کنارے سینکڑوں افراد کا ٹریفک پل نہ بنانے پر احتجاجی مظاہرہ
چک نظام کے قریب دریائے جہلم کے کنارے سینکڑوں افراد کا ٹریفک پل نہ بنانے پر احتجاجی مظاہرہ، حکومت نے اگر ٹریفک پل نہ بنایا تو ڈی چوک اسلام آباد میں دھرنا دیں مقررین کا مظاہرین سے خطاب۔


ملک وال(نامہ نگار ) چک نظام کے قریب دریائے جہلم کے کنارے تحصیل ملک وال ، تحصیل پنڈدادنخان اور تحصیل بھیرہ کے سینکڑوں افراد نے گزشتہ 30سالوں سے وعدوں کے باوجود دریا پر ٹریفک پل نہ بنانے پر احتجاجی مظاہرہ کیا ۔ اس موقع پر مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے ایم پی اے نذر حسین گوندل کے بیٹے بلال نذر گوندل ایڈووکیٹ نے کہا کہ گزشتہ 30سالوں سے ہر حکومت لاکھوں عوام کو پل بنانے کے وعدے کر کے بیوقوف بنا رہی ہے لیکن دو صدور مملکت اور وزرائے اعظم کی طرف سے افتتاح کئے جانے کے باوجود ابھی تک اس اہم پراجیکٹ پر کام ہی شروع نہیں کیا گیا ۔ انہوں نے کہا کہ ہر حکومت اس عوامی منصوبے کے اے ڈی پی میں فنڈز مختص کرتی ہے سابق صدور جنرل مشرف اور آصف زرداری نے پنڈدادنخان اور ملک وال میں جلسہ کے دوران اس پل کے تعمیراتی کام کا باقاعدہ افتتاح بھی کیا لیکن بات افتتاح سے آگے نہ بڑھ سکی ۔ بلال نذر ایڈووکیٹ نے کہا کہ اگر اب حکومت نے پل کا تعمیراتی کام شروع نہ کیا تو تین تحصیلوں ملک وال، پنڈدادنخان اور بھیرہ کے سینکڑوں لوگ ڈی چوک میں اپنے حق کیلئے احتجاجی دھرنا دیں گے۔ یونین کونسل مڈھ پرگنہ کے سابق ناظم مشتاق گوندل اور ملکوال سٹی کے سابق ناظم ملک عبدالرشید نے کہا کہ اس پل کی تعمیر سے پانچ اضلاع منڈی بہاؤالدین ، سرگودھا ، جہلم، چکوال اور خوشاب کے لوگوں کو فائدہ ہو گا جبکہ تجارتی منڈیوں کو بھی اس سے بہت فائدہ ہو گا کیونکہ ملک کی 30فیصد معدنیات کی ترسیل پنڈدادنخان ، کھیوڑہ سے ہوتی ہے انہوں نے کہا کہ اس پل کی تعمیر سے تین گھنٹے کا فاصلہ 30منٹ میں طے ہو جائے گا پل نہ ہونے کی وجہ سے لوگ دریائی بیڑے کے ذریعے اڑھائی سو روپے دے کر گاڑیاں دریا کے ایک جانب سے دوسری جانب لے جاتے ہیں انہوں نے کہا کہ پل نہ ہونے کی وجہ سے تین تحصیلوں کی تجارتی منڈیاں بری طرح خسارے میں ہیں اور کئی تاجر اسی وجہ سے دیگر شہروں کی طرف ہجرت کر گئے ہیں۔انہوں نے وزیر اعظم میاں نواز شریف اور وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف سے مطالبہ کیا کہ وہ لاکھوں عوام کی فلاح کی خاطر اس پل کیلئے چار ارب کے فنڈز دے کر اسے تعمیر کروا دیں ۔تاکہ ان علاقوں کے لوگ بھی خوشحال ہو سکیں ۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں