پولیس کی ملی بھگت سے چک نظام روڈ ڈکیتوں کی آماجگاہ بن گیا،ڈکیتی کی وارداتیں معمول بن گئیں

vectoria bridge jehlum bridge malakwal PD Khan bridge
ملک وال(نامہ نگار)پولیس کی ملی بھگت سے چک نظام روڈ ڈکیتوں کی آماجگاہ بن گیا آئے روز ڈکیتی کی وارداتیں معمول بن گئیں درجنوں افراد ڈکیتوں کی فائرنگ سے زخمی ہونے اور مقدمات درج ہونے کے باوجود پولیس وارداتوں پر قابو پانے میں ناکام ہو گئی فی الفور چک نظام کے مقام پر پولیس چوکی بنا کر عوام کے جان و مال کا تحفظ کیا جائے انجمن تحفظ حقوق شہریاں کے صدر ملک اعجاز الحق مدنی کی میڈیا سے گفتگو ان کا کہنا تھا ملک وال شہر اور اس کے گردو نواح کے کئی لوگ گذشتہ دنوں میں چک نظام کے راستے پر سر شام ہی ڈکیتوں کے ہتھے چڑھ گئے محمد امتیاز ساکن محلہ شیرانوالہ جس کوڈکیتوں نے 2گولیاں مار کر شدید زخمی کیا ناصر باجوہ نامی شخص کی بھانجی کو بھی چک نظام کے راستے ڈکیتی کے دوران گولی لگنے سے شدید زخمی ہوئی جو لاہور علاج کے لیے ہسپتال داخل ہوئی اس کے علاوہ درجنوں ایسی وارداتیں ہیں جن میں معصوم لوگ سر شام ہی جو کام کاج اور روزی روٹی کی تلاش میں چک نظام پل کے زریعے دونوں اطراف کا سفر کرتے ہیں اور شام ڈھلتے ہی ڈکیتوں کے ہتھے چڑھ جاتے ہیں جبکہ پولیس اس معاملہ میں ڈکیتوں پر قابو پانے میں بری طرح ناکام ہو چکی ہے ملک اعجاز الحق مدنی نے وزیر اعلیٰ پنجاب سے مطالبہ کیا ہے کہ فی الفور چک نظام کے مقام پر پولیس چوکی کا قیام عمل میں لا کر سینکڑوں لوگوں کے جان او ر مال کی حفاظت کی جائے۔۔۔۔۔۔
*****

اپنا تبصرہ بھیجیں