پاکستان میں مثبت اور تعمیری سو چ کوفروغ دینے کے لیے سب کو مل کر اپنا بھر پور کر دار ادا کرنا ہوگا

media mic journalist press coverage
ملک وال(چو ہدری منیر احمد)جدید ٹیکنا لو جی نے انسان کو بے خبری کے اندھیرے سے نکال کر آگاہی کی روشنی میں پہنچا دیا ہے پاکستان میں مثبت اور تعمیری سو چ کوفروغ دینے کے لیے سب کو مل کر اپنا بھر پور کر دار ادا کرنا ہوگا ،سو شل میڈیا پر ہر انسان اپنے خیا لات کا اظہار کرنے میں آزاد ہے تاہم بیک وقت یہ رحمت بھی ہے اور زحمت بھی ۔عوامی حلقے
تفصیلات کے مطا بق میڈیا کے سر وے میں عوامی و سما جی حلقوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات نے کہا کہ جدید ٹیکنا لو جی اور سو شل میڈیا نے انسان کے درمیانی فاصلوں کو ختم کر دیا ہے اندھیروں سے نکال کر روشنی میں پہنچا دیا ہے تاہم جہاں اس کے متعدد فوا ئد ہیں وہیں اس کا منفی استعمال کے نقصانات بھی ہیں میڈیا پر ہر انسان اپنے خیالات کا اظہا ر کرنے میں آزاد ہے مگر آزادی کا مطلب دوسروں کے احساسات کو مجروح کرنا نہیں ہوتا سو شل میڈیا عوامی پلیٹ فارم ہے جہاں عام آدمی سے لے کر شو بز اور سیاست اور کھیل سمیت تما م شعبہ جات کی شخصیات مو جود ہیں جہاں ہر کوئی اپنے مسائل سے میڈیا اور حکومت کو آگاہ کر سکتا ہے تاہم ان فوائد کے ساتھ اس کا غلط استعما ل اس کو نقصان بھی پہنچا رہا ہے سو شل میڈیا خاص طور پر فیس بک پر جعلی اکاؤنٹس کی بہاتات نے شرفا ء کی پگڑیاں اچھا لنے کا ذریعہ بنا لیا ہے سیاست ،معا شرت اور دین کسی کو نہیں بخشا اپنی انتہا پسندانہ سو چ کی بدولت سب کو خوب گھٹیا الزامات اور بہتان بازی غیر اخلاقی تصا ویر اور ویڈیوز میں شرم و حیا کی حدود پار کرنے والوں کو سزا دینے کے لیے قا نون سازی ضروری ہے اسے مذہبی و مسلکی منافرت پھیلانے والے شر پسند عنا صر کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائے تا کہ وطن عزیز پاکستان میں مثبت اور تعمیری سوچ کو فر و غ دیا جا سکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں