پنجاب ٹیچرز یونین نے پیک کے تحت پانچویں اور آٹھویں کے امتحانات کے بائیکاٹ کا اعلان کر دیا

Bashir Warraich president teacher unior mandi bahauddin news

پنجاب ٹیچرز یونین نے یکم فروری سے شروع ہونے والے پیک کے تحت پانچویں اور آٹھویں کے امتحانات کے بائیکاٹ کا اعلان کر دیا، کوئی ٹیچر امتحانی ڈیوٹی نہیں دے گا کسی سنٹر پر امتحان نہیں ہونے دیں گے، یونین رہنما۔
ملک وال(نامہ نگار) پنجاب ٹیچرز یونین کے ضلعی صدر محمد بشیر وڑائچ ، مرکزی نائب صدر ڈاکٹر نواز انجم، ضلعی نائب صدر راجہ ذوالفقار علی ، سیکرٹری اطلاعات محمد ارشد،ایس ای ایس ٹیچرز یونین کے ضلعی صدر خضر حیات کھوتھی اور دیگر نے گزشتہ روز مقامی صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت کا پڑھو پنجاب ، بڑھو پنجاب منصوبہ در اصل تعلیم و ٹیچر دشمن منصوبہ ہے انہوں نے کہا کہ حکومت نے ابھی تک ہمارے مطالبات منظور نہیں کیا اس لئے پنجاب کی تمام اساتذہ تنظیموں نے یکم فروری سے ہونے والے پانچویں اور آٹھویں کے پیک امتحانات کا مکمل بائیکاٹ کرنے کا اعلان کر دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ فیصلہ راولپنڈی میں پنجاب ٹیچرز یونین ، متحدہ محاذ اساتذہ اور دیگر اساتذہ تنظیموں کے مرکزی اور ضلعی قائدین کے اجلاس میں کیا گیا ہے۔ پی ٹی یو کے ضلعی صدر محمد بشیر وڑائچ نے کہا کہ اساتذہ امتحانی ڈیوٹی دیں گے اور نہ ہی سنٹرز میں امتحانات ہونے دیں گے۔انہوں نے کہا کہ مطالبات نہ مانے گئے تو بائیکاٹ کا سلسلہ دیگر امتحانات تک وسیع کر دیں گے۔یونین رہنماؤں نے کہا کہ پنجاب حکومت سکولوں کی نجکاری کر کے تعلیم کو غریب طلبا کی پہنچ سے دور کرنا چاہتی ہے، پیک کے فرسودہ امتحانی نظام کے نتائج ، طالبعلم کے ڈراپ آؤٹ، طلبا کی حاضری سمیت کئی مختلف بہانوں سے اساتذہ کو سزائیں دے کر ان کی تذلیل کی جا رہی ہے جسے کسی صورت برداشت نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت پنجاب میں تعلیم کی سہولتیں تو کسی تھرڈ ورلڈ ملک کی طرح دیتی ہے جبکہ نتائج ترقی یافتہ ممالک کے معیار کے چاہتی ہے۔ سزاؤں کی آڑ اساتذہ کا معاشی قتل کر کے انہیں ملازمت چھوڑنے پر مجبور کیا جا رہا ہے تاکہ پرائیویٹ سیکٹر کو فروغ مل سکے لیکن ایسا ہر گز نہیں ہونے دیں گے اس کیلئے اعلیٰ عدلیہ کا دروازہ بھی کھٹکھٹائیں گے ۔۔۔۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں