گاڑیوں پر فوگ لائٹس لگائیں،ہیلمٹ کا استعمال کریں،موٹر سائیکل چلاتے وقت دستانے ضرور پہنیں

trafic-lights-anticater-lights-300x225
منڈی بہاؤالدین ( ایم بی ڈین نیوز ) سلو موونگ وہیکلزپر ریفلیکٹرز کا استعمال کریں۔ گاڑیوں پر فوگ لائٹس لگائیں۔سردی میں موٹر سائیکل چلاتے وقت دستانے ضرور پہنیں۔ ہیلمٹ کا استعمال کریں۔یہ باتیں انچارج ایجوکیشن ونگ ایس آئی ٹریفک پولیس منڈی بہاؤالدین منظور حسن نے مختلف تعلیمی اداروں ، ٹرانسپورٹ اڈہ جات اور پبلک مقامات پر طلباء و طالبات ، ڈرائیورز اور عوام الناس کو روڈ سیفٹی اور ٹریفک رولز بارے لیکچر دیتے ہوئے کہیں۔
انچارج ایجوکیشن آفیسر منظور حسن نے بتایا کہ حکومت پنجاب کی ہدایات کی روشنی میں عوام الناس میں شعور اجاگر کرنے کیلئے سکولوں، کالجوں اور ٹرانسپورٹ اڈہ جات پر جا کر عوام الناس کو ٹریفک قوانین /روڈ سیفٹی سے متعلق خصوصی آگاہی اور اس سے متعلق حفاظتی تدابیر کے حوالہ سے لیکچرز دینے اور پمفلٹ تقسیم کرنے کا عمل جار ی ہے ۔اسی حوالہ سے انہوں نے اقبال پبلک سکول سوہاوہ، گورنمنٹ ہائی سکول سوہاوہ، دلو آنہ، غزالی بوائز ہائی سکول واسو روڈ، غزالی بوائز اینڈ گرلز ہائی سکول واسو روڈ اور امریکن لائسٹف سکول میں طلباء و طالبات کو لیکچرز دئیے اور پمفلٹ بھی تقسیم کئے۔انہوں نے کہا کہ سلوموونگ وہیکلز پر ریفلیکٹرز کا استعمال کریں۔ ریفلیکٹڑز لگانے کا عمل ٹریفک پولیس بھی سر انجام دے رہی ہے۔گزشتہ دنوں بھی 350ٹرالیوں پر ریفلیکٹرزلگائے گئے۔انہوں نے کہا کہ سخت سردی کے دوران موٹر سائیکل چلاتے وقت دستانے ضرور پہنی اور ہیلمٹ کا استعمال کریں کیونکہ حادثہ کی صورت میں ہیلمٹ آپ کو 80سے 90پرسنٹ تک سر کی شدید چوٹ سے محفوظ رکھتا ہے۔ دوران دھند گاڑیوں پر فوگ لائٹس لگائیں۔ اگر فوگ لائٹس نہ ہوں تو چمکیلی ٹیپ کا استعمال کریں تا کہ حادثات سے بچا جا سکے۔ انہوں نے مذید بتایا کہ کرشنگ سیزن شروع ہے۔ گنے کی ٹرالیوں کی پچھلی سائیڈ پر ٹریکٹر کی بیٹری سے تار منسلک کر کے لائٹس لگائیں یا رنگین جھنڈیاں اور چمکیلی ٹیپ لگائیں۔ دوران ڈرائیونگ غلط اوور ٹیکنگ اور موبائل فون کا استعمال نہ کریں اس سے آپ کے ساتھ ساتھ کسی دوسرے کی زندگی بھی خطرے میں پڑ سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پیدل چلتے ہوئے یا دوران ڈرائیونگ اپنے اور دوسروں کے حقوق کا خیال رکھیں۔روڈ سیفٹی اور ٹریفک رولز پر عمل کرکے اپنے مہذب شہری ہونے کا ثبوت دیں۔ عملہ ٹریفک پولیس کے ساتھ تعاون کریں اور حادثات سے بچاؤ کیلئے کیے جانیوالے اقدامات میں اپنا کردار ادا کریں تا کہ حادثات کی شرح میں نمایاں کمی ہو سکے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں