125

ملک پر قرضوں کا مجموعی بوجھ 41 ہزار 489 ارب روپے ہوگیا

اسلام آباد: وزارت خزانہ نے کہا ہے کہ ملک پر قرضوں کا مجموعی بوجھ 41 ہزار 489 ارب روپے ہوگیا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق وزارت خزانہ نے ڈیٹ پالیسی اسٹیٹمنٹ 2019۔20ء رپورٹ جاری کردی جس کے مطابق جون 2018ء تا ستمبر 2019ء قرضوں میں 11 ہزار 610 ارب روپے اضافہ ہوا جس کے بعد ملک پر قرضوں کا مجموعی بوجھ 41 ہزار 489 ارب روپے ہوگیا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ قرضوں میں اضافہ یکم جولائی 2018ء سے 30 ستمبر 2019ء کے دوران ہوا اور مجموعی قرض جی ڈی پی کے 94.3 فیصد تک پہنچ گیا جب کہ ڈیٹ لیمیٹیشن ایکٹ کے مطابق قرض جی ڈی پی کا 60 فیصد سے زیادہ نہ ہو۔

وزارت خزانہ کے مطابق ملک کے مجموعی قرض میں مقامی حکومتی قرضوں کا حجم 22 ہزار 650 ارب روپے اور غیر ملکی حکومتی قرضوں کا حجم 10 ہزار 598 ارب روپے ہے جب کہ پاکستان کی مجموعی جی ڈی پی 44 ہزار 3 ارب روپے کی ہے۔

وزارت خزانہ کا کہنا ہے کہ 2018.19ء میں روپے کی قدر گرنے سے 3 ہزار 61 ارب روپے قرض بڑھا اور پاکستان کا مجموعی قرض ریونیو اہداف سے 667 گنا زیادہ ہے، ایف بی آر ریونیو اہداف جی ڈی پی کا صرف 5.6 فیصد ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں