56

کوئی جرم کیا نہ دھماکہ کرنے گئی تھی، حریم شاہ

دفترخارجہ کی راہداريوں ميں بھارتی گانوں پر ویڈیوز بنانے والی ٹک ٹاک اسٹار حریم شاہ کا کہنا ہے کہ ان کا دفتر خارجہ جانا اتنا بڑی بات نہیں ہے نہ انہوں نے کوئی جرم کیا ہے۔ لوگ اس حوالے سے تنقید کرنا بند کریں۔

پاکستان کا ہرشہری اہم سرکاری عمارتيں ديکھنے کی خواہش رکھتا ہے لیکن وہاں تک رسائی سب کیلئےممکن نہیں ہوتی۔

ٹوئٹرپروائرل ویڈیوزمیں حریم اعلیٰ سطح کے اجلاس کیلئے مختص کمرے میں صدارتی کرسی پر بھی براجمان ہوئیں۔۔ویڈیوزسامنے آنے کے بعد حکومتی حلقوں پرخاصی تنقید بھی ہوئی۔ حریم شاہ کو آج سماء کے پروگرام ’’نیا دن ‘‘ میں مدعو کیا گیا تھا جہاں اس حوالے سے ان سے بات چیت کی گئی ۔

بطورعام شہری حريم شاہ کو دفترخارجہ تک آسانی سے رسائی کے علاوہ ویڈیوز بنانے کا موقع کیسے ملا؟َ اس سوال کے جواب میں حریم کا کہنا تھا کہ میں بھی عام پاکستانیوں جیسی ہوں،کوئی ایسا خاص معجزہ یا کرامت نہیں جو ڈسکس کروں۔ تنقید کرنا آسان کام ہے جو فارغ لوگ کرتے ہیں کہ دوسروں کی عزت اچھال سکے، مجھے کسی بات کی پرواہ نہیں، اپنے اعمال کی جوابدہ ہوں دوسروں کی باتوں کا جواب دینا ضروری نہیں سمجھتی۔

حریم شاہ نے کہا کہ شاہ محمود قریشی میرے والد کی طرح اور انتہائی قابل احترام ہیں،میں وہاں ان سے ملنے گئی تھی۔ کارڈ دکھا کرمرکزی دروازے سے عام لوگوں کی طرح شناخت ظاہرکرکے گئی تھی لیکن شاہ محمود قريشي دفترخارجہ ميں موجود نہيں تھے۔ سب کی موجودگی ميں کانفرنس روم گئی جہاں عملہ موجود تھا اور معمول کی طرح کام کر رہا تھا۔ مجھے علم نہیں تھا کہ وہاں ويڈيو بنانا منع ہے، اگر کوئی مجھے منع کرتا تو میں ویڈیو نہ بناتی۔ کانفرنس روم کے دونوں دروازے کھلے تھے۔ میں نے وہاں جاکرکوئی بڑاجرم نہيں کيا نہ ہی کوئی بل پاس کیا۔

حریم شاہ نے تنقید کرنے والوں سےکہا کہ میں نے کانفرنس روم ميں جاکربم دھماکہ نہيں کيا نہ ہی ساتھ کوئی ایسی چیز لیکر گئی تھی تو پھروہ لوگ مجھے کیوں روکتے۔ جو اچھے لوگ ہوتے ہیں وہ کبھی کسی پر تنقيد نہيں کرتے۔ کسی کو گالی دينے والا خود کو کيسے شريف کہے گا؟۔ انسان کی زبان اُس کی شخصيت کی عکاسی کرتی ہے۔

انہوں نے واضح کیا کہ مجھے کوئی وہاں نہیں لیکر گیا تھا بلکہ میں خود دفترخارجہ گئی تھی۔ اس حوالے سے کوئی پلان نہیں تھا۔ شاہ محمود کی وہاں موجودگی کی خبر سن کر گئی تھی۔ کسی کا ڈر يا خوف نہيں جو جھوٹ بولوں۔ میرے لیے دفترخارجہ جانا روٹين کی بات تھی کیونکہ مجھے ویڈیو بنانا تھی۔ میرے علم میں نہیں تھا کہ اس بات کا اتنا ایشو بن جائے گا۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ عملے کے کسی فرد سے مدد مانگی تھی جس نے میری تصاویراور ویڈیوز بنادیں۔

ٹک ٹاک اسٹارنے وزیراعظم عمران خان سے بھی ملاقات کی خواہش کا اظہارکیا اور بتایا کہ ان سے 3، 4 بارملاقات ہوچکی ہے۔ دبئی میں ان سے ملاقات ہوئی جبکہ ان سے ملنے کیلئے ان کے گھر بنی گالہ بھی گئی تھے جب وہ وزیراعظم نہیں تھے۔

حریم شاہ سے سوال کیا گیا کہ کیا آپ کی کوئی پسندیدہ شخصیت کوٹ لکھپت جیل میں بھی ہے؟ جس پرانہوں نے جواب دیا کہ وہاں کئی عظيم لوگ جاچکے ہيں، یہ ہماری سیاست کا حصہ ہے۔ حريم شاہ نے نوازشريف کی صحت يابی کيلئےنیک تمناؤں کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان کی بيماری کا سن کر دکھ ہوا۔ ان کیلئے دعا کرتی ہوں ۔

دفترخارجہ جانے سے متعلق کسی قسم کی انکوائری کیلئے رابطہ سے متعلق سوال پرحریم شاہ نے کہا کہ ابھی تک انکوائری کيلئے کوئی رابطہ نہيں کیا گیا۔ انکوائری ہوئی تو موقف بيان کروں گی۔ وہاں خود گئی تھی اور کسی کا نام لینے کے بجائے جو سچ ہے وہی بیان کروں گی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں