148

’’پاکستان صحت کارڈ‘‘حکو مت کا عوام دوست اقدام (تحریر: راجہ منصور علی خان(

’’پاکستان صحت کارڈ‘‘حکو مت کا عوام دوست اقدام۔۔۔تحریر ۔۔۔راجہ منصور علی خان

پرا ئم منسٹر نیشنل ہیلتھ پرو گرام صحت عامہ کا سب سے بڑا منصوبہ ہے جس کے تحت ملک کے چاروں صوبوں ، آزاد و جمو ں کشمیر اور گلگت و بلتستان میں غربت کی لکیر سے نیچے زندگی بسر کر نیوالے لاکھوں مستحق خا ندانوں کو’’ پاکستان صحت کا رڈ ‘‘ کے ذریعہ ملک کے بہترین و جدید علا ج معالجہ کی سہو لتوں سے آراستہ سرکاری اور نجی ہسپتالوں میں علا ج معالجہ کی سہو لیات فرا ہم کی جارہی ہیں ۔غریب و مستحق لوگوں کو صحت کی مفت سہولت کی فراہمی کے لحاظ سے دنیا بھر میں یہ اپنی نو عیت کا واحد پروگرام ہے جسے نہ صرف بین الاقوامی سطح پر سر اہا گیا ہے بلکہ کئی ایک مما لک اس پرو گرام کی اہمیت و افادیت اور عوامی فلا ح و بہبود کی مو ئثر اور فعال کا وش کی تقلید کا آغاز کر چکے ہیں ۔ اس پرو گرام کا دائر ہ کا ر کو ملک کے چاروں صوبوں ، آزاد و جموں کشمیر اور گلگت و بلتستان ( پورے پا کستان ) تک بڑھا دیا گیا ہے ۔اس پروگرام کے تحت پا کستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ مستحق ، مفلس و نادار اور کم آمدنی والے خاندانوں کو صحت کی معیاری سہو لیات کی فراہمی کیلئے پاکستان صحت کارڈ جاری کئے جارہے ہیں ۔کم آمدنی والے خا ندان جن کے کو ائف نادرا ڈیٹا بیس سے تصدیق شدہ ہوں اور بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام میں شامل ہوں، اس پرو گرام سے مستفید ہو نیکے اہل ہیں ۔

اس کارڈ کے حامل خا ندانوں کو سالا نہ تین لا کھ روپے تک علا ج معالجہ کی سہو لیات بلا معاوضہ فرا ہم کی جا رہی ہیں ۔مزید براں پاکستان صحت کارڈ کے حامل گھرانوں کو ہیلتھ انشورنس کی سہو لت بھی فراہم کی جا رہی ہے ۔پا کستان صحت کارڈ کے حا مل خا ندانوں کو مختلف مہلک اور خطر نا ک امراض ( جن کے علاج معالجہ پر کثیر سرمایہ خر چ ہوتا تھا اور جس کا علا ج معالجہ عام آدمی کے بس سے با ہر تھا ) کے علا ج معالجہ کی بلا معاوضہ سہو لت فراہم کی جار ہی ہے ۔پاکستان صحت کارڈز کے تحت پچاس ہزار روپے سالا نہ فی خا ندان (بو قتِ ضرورت ایک لا کھ رپے تک توسیع ) تما م میڈیکل اور سرجیکل امراض بشمول ہرنیہ ، اپینڈ کس ، فریکچرز ، انجریز ، پِتّے کی پتھری ، گُردے کی پتھری ، مو تیا ، گیسٹرو ، اینٹرائٹس ، ٹائیفائیڈ ، نمو نیہ وغیر ہ ، زچہ بچہ خدمات ( نا رمل پیدا ئش ،سی سکیشن ) اور ہر قسم کی ایمر جنسی میں مفت علاج کی سہو لت فراہم کی جا رہی ہے جبکہ پیچیدہ امراض کے علا ج پیکج کے تحت اڑھائی لا کھ روپے سالا نہ فی خا ندان سات پیچیدہ امراض ، دل کی بیماریاں ( اینجو پلا سٹی ، بائی پاس) ، ذیا بیطس اور اس کی پیچیدگیاں ، ٹریفک حا دثات اور جل جا نا ( زندگی اور اعضا ء کو بچا نے کا علا ج ) گردوں کے فیل ہو نے پر پیچیدگیوں کا علا ج اور ڈائلا ئسز ، متعدی انفکیشن کی پیچیدگیاں ( ہیپاٹائٹس ، ایچ آئی وی ) ، جِگر ، گُردے اور دل کے افعال کا فیل ہو جا نا اور کینسر ( کیمو تھراپی ، ریڈیو تھراپی ، سرجری ) کے مفت علا ج کی سہو لت فر اہم کی جا رہی ہے ۔

پنجاب میں پرائم منسٹر نیشنل ہیلتھ پروگرام کے تحت مفت سہو لیات کی فراہمی کیلئے پا کستان صحت کار ڈ کا اجرا ء پورے زور و شور سے جاری ہے اور مجموعی طورپر لاکھوں خا ندانوں کے کروڑوں افراد حکو مت کی مفت علا ج معالجہ کی سہو لیات سے مستفید ہو رہے ہیں ۔پاکستان صحت کارڈز کے حا مل خا ندانوں کو پنجاب میں منتخب کر دہ سرکاری و نجی ہسپتالوں سے مفت علا ج معالجہ کی سہو لت حاصل ہیں اور اس مقصد کیلئے حکو مت پنجاب نے رجسٹرڈ خا ندانوں کو ہسپتال میں داخلے کی صور ت میں ثانوی علا ج کیلئے سالانہ پچاس ہزار روپے جبکہ ترجیحی علا ج کیلئے سالا نہ اڑھائی لا کھ روپے تک کی رقم فراہم کررہی ہے۔

صحت کی سہو لیات کی فراہمی کسی بھی متوازن اور خو شحال معاشرے کے لئے نہایت کلیدی اہمیت و افادیت کی حا مل ہو تی ہے کیو نکہ صحت مند معاشرہ کی تشکیل ہی صحت مند قوم کی تخلیق کو یقینی بنا تی ہے ۔وفاقی حکومت نے صحت کے شعبے کی ترقی کیلئے مزید عملی اقدامات اٹھاتے ہوئے سگریٹ کے ہر پیکٹ پر دس روپے اور کولڈ ڈرنکس کی بوتل پر ایک روپیہ ہیلتھ ٹیکس نافذ کر دیا ہے جس سے مجموعی طورپر 50ارب روپے حاصل ہونگے جنہیں صحت کے شعبے کی ترقی پر خرچ کیا جائیگا اور مزید عملی اقدامات کیلئے حکومت پنجاب نے سرکاری ہسپتالوں کے انتظام کو بہتر بنا نے ، ان ہسپتالوں میں علا ج معالجہ کی جدید تر ین سہولیات کی فراہمی اور عوام الناس کیلئے علا ج معالجہ ، تشخیص اور مفت ادویات کی فراہمی کی سہو لیات کا جا مع اور مر بوط پر وگرام جاری رکھا ہوا ہے ۔ پا کستان صحت کارڈ کا اجراء حکو مت پنجاب کی صحت کے شعبہ میں جاری عوام دوست پا لیسوں کو مہمیز دینے کے مترادف ہے ۔پا کستان صحت کارڈ سے حقیقی معنوں میں ایسے افراد کو مُستقل بنیادوں پر علا ج معالجہ کی سہو لیات میسر آرہی ہیں جو ما ضی میں ان سہو لیات سے محروم رہے ہیں ۔بلا شبہ پرا ئم منسٹر نیشنل ہیلتھ پروگرام سما جی و فلا حی اصلا حات کی جا نب ایک سنگ میل ہے جس سے حکو مت پنجاب کی صوبے میں مو جود ہر طبقے تک علا ج معالجہ کی معیاری اور جدید سہو لیات کی فراہمی کی ترجیح اور غریب افراد کی کسی ما لی رکاوٹ کے بغیر با وقار انداز میں علا ج معالجہ کی سہولیات کی دستیا بی کے عزم کو تقویت ملی ہے ۔

وزیر اعظم نیشنل ہیلتھ پروگرام کے تحت کاروانِ صحت علا ج معالجہ کی مفت سہو لیات لے کر ملک کے لا کھوں مفلس اور مایوس افراد کی دہلیز تک پہنچ رہا ہے اور حکو مت پا کستان کے اس انقلابی پروگرام کی بدولت معاشرے کا مفلو ک الحا ل طبقہ بھی سکون کا سا نس لے سکے گا ۔اب انہیں مہلک اور خطر نا ک امراض کے علا ج کے لئے گھر کی چیزیں نہیں بیچنا پڑیں گی ۔انہیں علا ج معالجہ کیلئے قرض نہیں لینا پڑے گا ۔ان کے لواحقین کو اپنی مجبو ریوں کی بنا پر دربدر نہیں ہو نا پڑے گا بلکہ اُن کا علا ج پا کستان کے معیاری سرکاری اور جدید ترین سہو لتوں سے آرستہ نجی ہسپتالوں میں بلا معاوضہ ہو سکے گا ۔ضرورت اس امر کی ہے کہ اس پروگرام کے تحت فراہم کر دہ سہو لیات کی ما نیٹرنگ کے میکا نزم کو انتہا ئی موئثر بنا یا جا ئے تا کہ پا کستان صحت کارڈ نہ تو کسی غیر مستحق شخص یا خا ندان کو جاری ہو سکے اور نہ ہی کو ئی اس کارڈ کا غلط استعمال کر سکے ۔

تحریر ۔۔۔راجہ منصور علی خان

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں