103

محکمہ ریلوے نے ملک وال سے پنڈدادنخان تک ایک اور مسافر ٹرین چلادی، مسافروں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی،دونوں تحصیلوں کے عوام کا وفاقی وزیرریلوے کو خراج تحسین

ملک وال(نامہ نگار) ملک وال اور پنڈدادنخان تحصیلوں کے درمیان دریائے ہونے کی وجہ سے زمینی راستہ نہ ہونے سے ہزاروں مسافروں کو 100کلومیٹر طویل زمینی سفر طے کرنا پڑتا تھا جبکہ انگریز دور حکومت میں چک نظام کے مقام پر وکٹریہ ریلوے پل کی تعمیر سے یہ سفر صرف 20کلومیٹر رہ جاتا ہے روزانہ پانچ ہزار سے زائد مسافر ٹرین کے ذریعے ملک وال اور پنڈدادنخان کے درمیان سفر کرتے تھے لیکن پی پی پی دور حکومت میں ریلوے بحران کی وجہ سے کھیوڑہ، غریبوال اور پنڈدادنخان کی دس ٹرینیں بند کر دی گئیں جس سے دونوں تحصیلوں کے لاکھوں لوگ اس کم مسافت کی سفری سہولت سے محروم ہو گئے بعد ازاں حکومت نے ملک وال سے پنڈدادنخان کیلئے مسافر ٹرین بحال کر دی جو دن میں صرف دو ٹرپ لگاتی تھی جو ناکافی تھی اہل علاقہ کے پرزور مطالبہ پر وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کی ہدایت پر ڈی ایس ریلوے راولپنڈی عبدالمالک نے ایک اور ٹرپ کا اضافہ کر دیا جو روزانہ دن 11بجے ملک وال سے روانہ ہو کر 11.35پر پنڈدادنخان پہنچے گی اور پھر 11.45پر واپس ملک وال کیلئے روانہ ہو ا کرے گی اس طرح ملک وال سے پنڈدادنخان کے درمیان ٹرین کے تین ٹرپ چلیں گے جن کے اوقات کار کیمطابق پہلا ٹرپ صبح 8بجے دوسرا دن 11بجے اور تیسرا سہ پہر 3بجے ملک وال سے روانہ ہوا کرے گا۔ جس پر انجمن تحفظ حقوق مسافراں ، دونوں تحصیلوں کی انجمن تاجران نے وفاقی وزیر ریلوے اور ڈی ایس ریلوے راولپنڈی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے مزید مطالبہ کیا کہ اس روٹ پر ٹرین کے مزید دو ٹرپ چلا ئے جائیں تاجر و شہری حلقوں نے کہا کہ اس روٹ سے محکمہ ریلوے کو کافی آمدنی ہوتی ہے۔۔۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں