49

تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال پھالیہ میں لگایاجانے والا ’ہیلتھ ویک‘ نامناسب مینجمنٹ کی وجہ ہیپاٹٹس کے مریضوں کیلئے ریلیف کی بجائے تکلیف کے ساتھ کروڑوں روپے کی نقصان کا باعث بن گیا

پھالیہ(بیوروچیف) محکمہ صحت پنجاب کے تحت گذشتہ ماہ تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال پھالیہ میں لگایاجانے والا ’’ہیلتھ ویک‘‘ نامناسب مینجمنٹ کی وجہ ہیپاٹٹس کے مریضوں کیلئے ریلیف کی بجائے تکلیف کے ساتھ ساتھ حکومت کے کروڑوں روپے کی نقصان کا باعث بن گیا۔ ہیلتھ ویک میں ہیپاٹٹس کیلئے کی گئی سکریننگ کے بعد جن لوگوں کی ہیپاٹٹس تشخیص ہوئی انہیں پہلا انجکشن موقع پر لگادیا گیا ایک ماہ کے اندرہیپاٹٹس بی کا دوسرا انجکشن لگایا جاناتھا جس کی مقررہ تاریخ 18اور20ستمبر2017تھی جو کہ گذر چکی ہے جبکہ تیسرا انجکشن 6ماہ بعد لگایا جانا تھا اور انہیں تاحال دوسرا انجکشن نہیں لگایا جاسکا جس کی وجہ سے پہلے انجکشن کا ثربھی بے سود ہوگیا علاوہ ازیں ہیپاٹٹس سی کے جن مریضوں کی PCRٹسٹ کی گئی ان کی رپورٹ بھی تاحال موصول نہیں ہوئی اور نہ ہی اس کی متعلقہ میڈیشن صحت کے ادارے کو فراہم کی گئی ہے جس کی وجہ سے حکومت پنجاب کا یہ ’’ہیلتھ ویک‘‘ ہیپاٹٹس کے مریضوں کی ذہنی کوفت کے ساتھ ساتھ کروڑوں روپے کی نقصان کا باعث بن گیا ہے اس سلسلہ میں جب محکمہ ہیلتھ کے عملہ سے پوچھا گیا تو انہوں نے نام نہ لینے کی شرط پر بتایا کہ ابھی تک ہیپاٹٹس بی کے انجکشن ہمیں فراہم نہیں کئے گئے اور نہ ہیپاٹٹس سی کے مریضوں کی PCRروپورٹس ملیں ہیں نہ میڈیسن فراہم کی گئی ہیں جس کی وجہ سے یہ تعطل پیدا ہوا۔اس سنگین غفلت کا ذمہ دار کون ہے،۔؟ عوامی اور رفاہی حلقوں نے اس مجرمانہ غفلت کے مرتکب افسران کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا ہے جن کی وجہ حکومت پنجاب کا یہ رفاہی پروگرام نہ صرف فلاپ ہوا بلکہ عوام میں بے چینی اور پریشانی کا باعث بن گیا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں